273

حوثی باغیوں کے سعودی عرب پر7بیلسٹک میزائل حملے ناکام ، پاکستان کی سخت مذمت

الریاض، اسلام آباد (پاکستان اپ ڈیٹس )یمن میں آئینی حکومت کی بحالی کے لیے سرگرم عرب فوجی اتحاد نے یمن سے حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی عرب پر سات بیلسٹک میزائل حملے ناکام بنا کر مملکت کو تباہی سے بچا لیا۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق عرب فوجی اتحاد کے ترجمان کرنل ترکی المالکی نے الریاض میں ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ ایران نواز حوثی شدت پسندوں نے سعودی عرب پر سات میزائل داغے۔ ان میں سے تین میزائل دارالحکومت الریاض کی طرف، ایک خمیس مشیط، ایک نجران اور دو جازان کی جانب داغے گئے تھے۔ترجمان کا کہنا ہے کہ حوثی شدت پسندوں کی جانب سے میزائل حملوں کا مقصد مملکت کو دہشت گردی سے دوچار کرنا، شہریوں کی جانوں کو خطرے میں ڈالنا اور بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانا تھا تاہم سعودی محکمہ دفاع اورعرب اتحادی فوج نے مشترکہ طورپر حوثیوں کے داغے گئے میزائل ہدف تک پہنچنے سے قبل فضائ ہی میں تباہ کردیے۔ابتدائی اطلاعات کے مطابق ایک میزائل کے ٹکڑے لگنے سے سعودی عرب میں مقیم ایک مصری شہری جاں بحق بھی ہوا ہے۔ اس حوالے سے مزید تفصیل جلد جاری کی جائے گی۔کرنل المالکی کا کہنا تھا کہ حوثیوں کی طرف سے یہ دشمنانہ اور اندھا دھاھند میزائل حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ ہے۔ ایران حوثیوں کی مدد کے ذریعے خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سازشیں جاری رکھے ہوئے ہے۔سعودی عرب اور دوسرے عرب ممالک حوثیوں کی طرف سے مسلسل بیلسٹک میزائل حملوں کی مذمت کرتے ہوئے انہیں اقوام متحدہ کی قراردادوں 2216 اور 2231 کی کھلم کھلا خلاف ورزی قرار دیتے ہیں۔پاکستان نے یمن میں حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی عرب پر بیلسٹک میزائل حملوں کی سخت مذمت کی ہے۔ اسلام آباد میں دفتر خارجہ سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کی حکومت اور عوام سعودی عرب کی علاقائی سلامتی اور حرمین شریفین کے خلاف خطرات کے مقابلے میں مملکت کی قیادت، حکومت اور عوام کے ساتھ کھڑے ہیں۔ بیان میں سعودی عرب کی جانب سے بیلسٹک میزائلوں کا حملہ ناکام بنائے جانے کو بھی سراہا گیا ہے۔ادھر علامہ طاہر اشرفی کی سربراہی میں پاکستان علماءکونسل نے اپنے ایک بیان میں دہشت گرد حوثی ملیشیا کی جانب سے سعودی عرب پر بیلسٹک میزائل حملوں کی مذمت کی ہے۔ کونسل نے باور کرایا کہ پاکستان اس موقع پر سعودی عرب کی اراضی کے دفاع اور اس کے امن کو برقرار رکھنے کے واسطے مملکت کے شانہ بشانہ کھڑا ہے۔ اس موقع پر علامہ طاہر اشرفی نے عالمی برادری اور اسلامی ممالک سے اپیل کی ہے کہ وہ اسلامی ممالک کے معاملات میں ایران کی مداخلتوں کو روکیں۔ انہوں نے سعودی سکیورٹی فورسز کی کارکردگی، حوثیوں کے حملوں کو ناکام بنائے جانے اور حرمین شریفین کے امن اور سلامتی کو برقرار رکھے جانے کو بھرپور انداز سے سراہا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں