117

بھارت سے دوستی و تجارت کیلئے نظریہ پاکستان کو کمزور کرنا حکمران جماعت کا بڑا جرم ہے: پروفیسر حافظ عبدالرحمان مکی

ملتان(پاکستان اپ ڈیٹس) جماعة الدعوة سیاسی امور کے سربراہ پروفیسر حافظ عبدالرحمان مکی نے کہا ہے کہ بھارت سے دوستی و تجارت کیلئے نظریہ پاکستان کو کمزور کرنا حکمران جماعت کا بڑا جرم ہے۔مقبوضہ جموں میں آٹھ سالہ بچی آصفہ بانو کے ساتھ مندر میں زیادتی اور بعد ازاں قتل جیسا واقعہ بھارت کے چہرے پر بدنما داغ ہے۔بین الاقوامی برادری کشمیریوں پر ہونے والے ظلم و ستم کا نوٹس لے۔کشمیریوں کے خون سے بے وفائی نواز شریف کی نااہلی کا بڑا سبب ہے۔ جماعة الدعوة کے خلاف اقوام متحدہ کی قراردادوں پر فوری عمل ہو گیا لیکن کشمیر و فلسطین پر اقوام متحدہ کی قراردادیں ردی کی ٹوکری میں دال دی گئیں۔کشمیریوں کی ہرممکن مددوحمایت کا سلسلہ جاری رکھیں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملتان کے مقامی ہال میں نظریہ پاکستان کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پرجماعة الدعوة جنوبی پنجاب کے مسﺅل ابو معاذ عمران،مولانا یاسر سلیم ،حاجی مشتاق سلفی،میاں سہیل احمد و دیگر نے بھی خطاب کیا۔کانفرنس سے خطاب کے دوران پروفیسر حافظ عبدالرحمان مکی کا کہنا تھا کہ کشمیر میں خون کی ہولی کھیلی جا رہی ہے اورکیمیائی ہتھیار وں کااستعمال کیا جارہا ہے جس کا استعمال بین الاقوامی قوانین کے تحت جرم ہے۔مقبوضہ جموں میں آٹھ سالہ بچی آصفہ بانو کے ساتھ مندر میں زیادتی اور بعد ازاں قتل جیسا واقع بھارت کے چہرے پر بدنما داغ ہیں۔مودی سرکار کی سرپرستی میں ہندو دہشت گرد تنظیمیں بچی سے زیادتی کرنے والے ملزمان کو بچانے کی کوششیں کر رہی ہیں۔پاکستان کا فرض بنتا ہے کہ کشمیریوں کو اعتماد دیں ان کے ساتھ کھڑے ہون ،ان کا وکیل بن کر کردار ادا کریں۔بین الاقوامی برادری کشمیریوں پر ہونے والے ظلم و ستم کا نوٹس لے۔انہوں نے کہا کہ حکمران بھارت اور امریکہ سے دوستیاں نبھانے کیلئے جماعة الدعوةجیسی محب وطن جماعت کی سرگرمیوں کو روک رہے ہیں،جو جماعت منتشر قوم کو نظریہ پاکستان پر متحد کر رہی ہے۔ انہوںنے کہاکہ حکومتیں کمزور ہوتی ہیں عقیدہ اور ملت طاقتور ہوتی ہے۔ یہ نظریہ کی طاقت تھی کہ قائداعظم ، علامہ اقبال اور دیگر قائدین نے قیام پاکستان کیلئے سب مسلمانوں کو ایک پلیٹ فارم پر جمع کیا۔ انہوںنے مسلمانوں کو ذہن دیا کہ مسلمان اور ہندو دو الگ الگ قومیں ہیں۔ ان کی تہذیب و ثقافت ایک جیسی نہیں ہے‘وہ اکٹھے نہیں رہ سکتے لیکن آج نظریہ سے نابلد لوگ اس سوچ و فکر کو تبدیل کر رہے ہیں۔ پاکستانی قوم کے دل و دماغ سے نظریہ پاکستان کو اوجھل کرنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ انڈیا پاکستان میں ہمارے جوانوں کو شہید کر رہا ہے مگر حکمران اس کیخلاف بولنے کیلئے تیار نہیں ہیں۔بھارت سے دوستی و تجارت کیلئے نظریہ پاکستان سے انحراف کیا جارہا ہے۔ حافظ محمد سعید پوری مسلم امہ کے پاسبان ہیں۔جماعة الدعوة جنوبی پنجاب کے مسﺅل ابو معاذ عمران،میاں سہیل احمد،مولانا یاسر سلیم،حاجی مشتاق سلفی ،مفتی زبیر احمد و دیگر نے کہا کہ پاکستان دو قومی نظریے کی بنیاد پر بنا اور یہ نظریہ ہی پاکستان کی اصل اساس ہے۔دو قومی نظریے کا مطلب ہے کہ ہندو اور مسلمان دو الگ قومیں اور مذہب ہیں یہ کسی صورت بھی اکٹھے نہیں رہ سکتے۔ہمارا تہذیب،تمدن،معاشرہ اور معاشرتی مسائل ایک دوسرے سے جداگانہ ہیں۔جب پاکستان بنانے کا نعرہ لگا تھا تب پورے برصغیر کے مسلمان لسانیت،صوبائیت اور فرقہ وارانہ اختلاف بھلا کر ایک جھنڈے کے نیچے جمع ہوئے ،آج بھی اسی طرح فرقہ وارانہ اختلافات سے نکل کر اکٹھا ہونے کا وقت ہے۔ہم نظریہ پاکستان کاتحفظ اور قوم کو دشمن کے مقابلہ کیلئے سیسہ پلائی دیوار بنائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں