75

مسلم لیگ ن کی قیادت کا موقف ووٹ کو عزت دو ملک کی تقدیر ضرور بدلے گا: چوہدری سلطان حیدر علی خان،،،چکوال کی مزید خبریں

چکوال(عبدالغفور منہاس سے)رکن صوبائی اسمبلی چوہدری سلطان حیدر علی خان نے کہا ہے کہ ضمنی الیکشن میں کامیاب ہونے کے بعد چار ماہ کے مختصر عرصے میں انہیں تعمیر و ترقی کی مختلف سکیموں کے لیے 65کروڑ روپے کے فنڈز جاری کیے گئے تھے مگر ہمیشہ کی طرح اس مرتبہ بھی الیکشن کمیشن کے احکامات آڑے آ گئے اور یکم اپریل کے بعد تمام ترقیاتی فنڈز پر پابندی لگا دی گئی۔ الیکشن کمیشن کے اس فیصلے کے خلاف اپنی قیادت کو آگاہ کر کے لاہور ہائی کورٹ میں پٹیشن دائر کر دی ہے جہاں سے انصاف ملنے کی پوری توقع ہے۔ وہ ایم پی اے ہاﺅس بھون چوک چکوال میں پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے پریس کانفرنس میں میونسپل کمیٹی چکوال کے ممبران سٹی مسلم لیگ شہر کی تمام وارڈز سے سپورٹران اور لیگی کارکنان نے بھی شرکت کی۔ چوہدری سلطان حیدر علی خان کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن نے صرف ان کی ترقیاتی سکیموں پر کام نہیں رکوایا بلکہ وہ سکیمیں بھی روک دی گئیں جو میرے والد مرحوم چوہدری لیاقت علی خان کے ترقیاتی پیکج کا حصہ تھیں۔ انہوں نے کہا کہ ضمنی الیکشن میں پنجاب اسمبلی کی تاریخ میں انہوں نے سب سے زیادہ ووٹ حاصل کرکے جو ریکارڈ قائم کیا تھا اس کا تمام تر سہرا پارٹی کارکنان کے سر جاتا ہے۔ جنہوں نے ان پر بھرپور اعتماد کا اظہار کیا۔ چوہدری سلطان حیدر علی خان کا کہنا تھا کہ وہ کبھی بھی اپنے چاہنے والوں کو مایوس نہیں کرینگے۔ انہوں نے بتایا کہ مسلم لیگ ن آئندہ الیکشن میں بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کر کے وفاق اور پنجاب میں ایک مرتبہ پھر اپنی حکومت بنائے گی۔ اور یہ حکومت ہمارے حکومت ہوگی اور عوام کی حکومت ہوگی ۔چوہدری سلطان حیدر علی خان نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی قیادت کا موقف ووٹ کو عزت دو ملک کی تقدیر ضرور بدلے گا اور مستقبل روشن ہوگا انہوں نے کہا کہ 2018ءکے الیکشن میں وہ ایک مرتبہ پھر فخر سے سربلند کرتے ہوئے عوام کی حمایت کے ساتھ الیکشن میں حصہ لیں گے اور آنے والا وقت پنجاب میں ن لیگ کا ہی ہوگا۔ کارکنان میاں نواز شریف کے نام اور جھنڈے تلے متحد ہیں اور غیر آئینی و غیر اخلاقی احکامات کی پرواہ نہیں کرتے۔ چوہدری سلطان حیدر علی خان نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ جو سلوک پارٹی اور ہمارے قائد کے ساتھ کیا جا رہا ہے وہ غیر آئینی ہے۔ غیر فطری طور پر ہماری جماعت کو دبانے کی کوشش کی گئی مگر پارٹی اتنا ہی ابھر کر سامنے آئی۔ پریس کانفرنس میں چیئرمین میونسپل کمیٹی چوہدری سجاد احمد خان، وائس چیئرمین چوہدری قمر شدیال، سینئر نائب صدر مسلم لیگ ن ڈاکٹر حبیب اللہ آفریدی، مسلم لیگی رہنما چوہدری شہریار سلطان، جنرل کونسلر چوہدری جعفر سلطان، عامر زیدی،حاجی نذیر سلطان، چوہدری معین اکرم، راجہ عبدالحمید، مولانا ممتاز صدیقی، نوید کہوٹ، چوہدری محمد نواز کنگ اور دیگر نے بھی شرکت کی۔

چکوال(بیو رو رپورٹ)تھانہ نیلہ کے علاقے جبی میں جبی اور ڈوک پروانہ کے دو مسلح گروپوں کے درمیان تصادم کے نتیجے میں ایک شخص جاں بحق اور8شدید زخمی ہو گئے۔ دو شدیدزخمی ہونے والوں کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔ واقعہ زمین کے تنازعہ پر پیش آیا اور دو گروپوں نے آمنے سامنے سے ایک دوسرے پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں محمد اعظم جاں بحق ہو گیا جبکہ دلاور عباس اور محمد نذیر سمیت آٹھ افراد شدید زخمی ہو گئے۔ جنہیں ریسکیو1122کے امدادی کارکنوں نے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال چکوال منتقل کیا جہاں پر دو شدید زخمی ہونے والوں کو ابتدائی طبی امداد کے بعد راولپنڈی منتقل کر دیاگیا۔پولیس نے واقعہ کا مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔

چکوال(بیو رو رپورٹ)قصبہ پھڈیال میں مسلح افراد کے گھر کے اندر گھس کر فائرنگ کر کے ماں اور دو بچوں کو قتل کر دیا اور گھر کے باہر تالا لگا کر فرار ہو گئے۔30سالہ نرگس پروین اپنے بارہ سالہ بیٹے زیشان ساجد اور پانچ سالہ بیٹی ب مصباح کے ہمراہ پھڈیال میں گھر کے اندر موجود تھی کہ مسلح افراد اندر داخل ہو گئے اور اندھا دھند فائرنگ کر دی، جس کے نتیجے میں نرگس دونوں بچوں سمیت موقع پر ہی جاں بحق ہو گئی۔ حملہ آور گھر کو باہر سے تالا لگا کر فرار ہو گئے۔ 10طلحہ سکول سے واپس آیا تو ماں اور بہن بہائی کو خون میں لت پت پایا پولیس کو اطلاع دی گئی جس پر پولیس نے تینوں لاشوں کوپوسٹ مارٹم کے بعد ورثاءکے حوالے کر دیا، مقتولہ تھانہ چوآسیدن شاہ پولیس چوکی بشارت کے علاقے لہڑی کاکاں کی رہائشی بتائی جاتی ہے مقتولہ کو دونوں بچوں سمیت لہڑی کاکاں میں سپردخاک کر دیاگیا، لہڑی کاکاں کے رہائشی افراد نے چیف جسٹس سپریم کورٹ سے از خود نوٹس لینے کی اپیل کی ہے، دریں اثناءمقتولہ کے دس سالہ کمسن بیٹے طلحہ ساجد اور اس کے بھائی شکیل نے بھی چیف جسٹس آف پاکستان سے اپیل کی ہے کہ مذکورہ المناک واقعہ کا از خود نوٹس لیں اور ملزمان کو قرارواقعی سزا دی جائے۔مقتول خان کے ورثاءنے اعلان کیا ہے کہ وہ چیف جسٹس کے دورہ کٹاس راج کے موقع پر ان کے سامنے پیش ہو کر احتجاج بھی ریکارڈ کرائیں گے اور از خود نوٹس کی اپیل بھی کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں