37

ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن میں تاخیری حربے ہمیں ملکی سیاست میں کردار ادا کرنے سے روکنے کی سازش ہے:سیف اللہ خالد

لاہور(پاکستان اپ ڈیٹس ) ملی مسلم لیگ کے صدر سیف اللہ خالدنے کہا ہے کہ ملک میں صوبائیت و لسانیت کے جھگڑے ختم اوراخوت و رواداری کی فضا پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ تعلیم و معیشت کا نظام بہتر اور قومی و ملی وحدت کو پروان چڑھایا جائے گا۔ نظریہ پاکستان رائج کرنا ملی مسلم لیگ کا سب سے بڑا ہدف ہے۔ہم73کے آئین کے تحت ملک میں قانون کی عملداری چاہتے ہیں۔ملی مسلم لیگ کی رجسٹریشن میں تاخیری حربے ہمیں ملکی سیاست میں کردار ادا کرنے سے روکنے کی سازش ہے۔ہم قومی وصوبائی کی تمام نشستوں پر الیکشن لڑیں گے۔ان خیالات کا اظہارانہوں نے یہاں مقامی ہال میں افطار پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان کا پرچم اٹھایا ہے اس کا تحفظ کریں گے۔ 73کے آئین میںقر آن و سنت کو بالا قانون کہا گیا ہے۔ہم ملک میں73کے آئین کے تحت قانون کی عملداری اور صوبائیت،لسانیت،عصبیت کے جھگڑے اور مفادات و معرکہ آرائی کی سیاست ختم کر کے اخوت اوررواداری کی فضا پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ہم قومی و ملی وحدت کو پروان چڑھائیں گے۔تعلیم و معیشت کے نظام کو بہتر کریں گے اور پاکستان جن مسائل کا شکار ہے ان کو حل کرنے کی کوشش کریں گے۔ پاکستان بے مثال قربانیوں کے نتیجہ میں حاصل ہوا ،یہ عام خطہ نہیں۔آنے والے وقت میں پاکستان دنیا کی قیادت کرے گا۔انہوں نے کہاکہ روایتی سیاست کا دور گزر چکا۔اب نظریاتی سیاست کا آغاز ہوا ہے۔ملی مسلم لیگ پاکستانی سیاست کی حقیقی پاسبان ہے۔ ہم پاکستان کی سیاسی فضاﺅں کو بدل کر رکھ دیں گے۔ہم نظریہ پاکستان کی بنیاد پر سیاست کریں گے کیونکہ یہی نظریہ بقائے پاکستان ہے۔جو قومیں نظریہ کو بھلا دیتی ہیں وہ صفحہ ہستی سے مٹا دی جاتی ہیں۔ہم نے نظریئے کا تحفظ کرنا ہے۔ہماری سیاست کی اسا س نظریہ پاکستان اور مقصد خدمت انسانیت ہے۔انہوں نے کہا کہ کہ ہم نوجوان قیادت کی رفاقت میںایک ایک فرد تک جائیں گے،ڈور ٹو ڈور،ایک ایک برادری تک جائیں گے اور ملی مسلم لیگ کے منشور کو عام کریں گے۔جماعتوں ،برادریوں کے نمائندوں سے درخواست کرتا ہوں کہ ہم سب ایک ہیں،ہمارا وطن ایک ہے۔ہم پاکستانی ہیں اور ہمارا دین اسلام ہے۔مفادات کی سیاست ختم اور اتحاد کی سیاست کو رواج دیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں