199

یوٹرن صرف جنگ میں بہتر حکمت عملی کے طور پر لیا جاسکتاہے:سینیٹر سراج الحق

پشاور(پاکستان اپ ڈیٹس)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ یہ ملک مدینہ منورہ کے بعد واحد ریاست ہے جو نظریہ کی بنیاد پر بنی۔ یہ زمین کا ایک ٹکڑا نہیں بلکہ ایک نظریہ ہے جب تک نظریہ پاکستان پاکستان میں نافذ نہ ہو ملک مضبوط نہیں ہو سکتا۔ ایمان و عشق رسول ﷺ کا تقاضاہے کہ اس نظام کے قیام کے لیے جدوجہد کریں جس کے لیے پیغمبر اسلام ﷺ دنیا میں تشریف لائے ۔ ہماری زندگیوں میں سارا حسن پیغمبر اسلام کی وجہ سے ہے اور آج ہم نے ترقی کرنی ہے تو سیرت رسول ﷺکی پیروی کرنا ہوگی ۔ حضور ﷺنے ہمیں ایک نظام دیا ہے اس نظام کی موجودگی میںلینن، ہٹلر اور دوسرے کسی ازم کی طرف دیکھنے کی ضرورت نہیں ہے ۔ہمارا سارا نظام سودکے بنیاد پر چل رہا ہے سودی نظام کی موجودگی میں ملکی معیشت نہ ترقی کرسکتی ہے نہ ٹھیک ہوسکتی ہے، کیونکہ قرآن میں سود کو اللہ اور رسول کے خلاف جنگ قرار دیا گیا اور یہ جنگ اللہ اور رسول سے نہیں جیتی جاسکتی۔ اسلامی نظام معیشت کی بجائے سودی معیشت اپنانے کی وجہ سے ہر بچہ مقروض اور ہر پاکستانی کے ہاتھوں میں ورلڈ بنک اور آئی ایم ایف کی ہتھکڑیاں ہیں ۔غربت ، مہنگائی اور بے روزگاری نے لوگوں کی چیخیں نکال دی ہیں ۔ملک و قوم کو درپیش تمام مسائل کا حل اسلامی نظام کا نفاذ ہے ۔ملک میں اسلامی نظام کے قیام اور مسائل کے حل کے لیے مشترکہ جدوجہد کی ضرورت ہے ۔ وہ نشترہال پشاور اور ودودیہ ہال سیدوشریف سوات میں عظیم الشان پیغام سیرت النبی ﷺ کانفرنسوں سے خطا ب کر رہے تھے ۔ ان کانفرنسوں سے امیر جماعت اسلامی خیبرپختونخوا سینٹر مشتاق احمد خان ، امیر جماعت اسلامی پشاور عتیق الرحمن ، امیر جماعت اسلامی سوات محمد امین اور دیگر قائدین نے بھی خطاب کیا۔
سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ آج کل معاشرے میں یوٹرن کی اصطلاح عام ہورہی ہے لیکن مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ جو وعدہ کرو پورا کرو اور کبھی بھی وعدہ خلافی نہ کرو ۔ یوٹرن صرف جنگ میں بہتر حکمت عملی کے طور پر لیا جاسکتاہے ، سیاست پر اسے منطبق کرنا غلط ہے۔ انہوںنے کہاکہ پاکستان کو اللہ تعالیٰ نے بے پناہ وسائل اور جفاکش و محنتی لوگوں سے نوازا ہے ۔ دنیا بھر میں پاکستانی اپنی خدا داد صلاحیتوں کی وجہ سے اپنا ایک مقام و وقار رکھتے ہیں لیکن اللہ کے نظام سے روگردانی کی وجہ سے آج ملک میں بھوک، غربت اور بے روزگاری ہے ۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کو قائم ہوئے 71 سال ہوگئے ہیں لیکن آج تک عدالتوں میں قرآن کا نظام قائم نہ ہوسکا اور انگریزوں کے جانے کے بعد بھی ہمارا عدالتی نظام ، تعلیمی نظام اور کلچر انگریز کے نظام سے آزاد نہ ہوسکا ۔ انہوںنے کہاکہ ہماری کامیابی اور ترقی ہمارے کردار ، عشق رسول ﷺ اور شریعت محمد ی سے ہے مغربی کلچر کے پیروی سے نہیں ہے ۔ انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی نے حرمت رسول ﷺ کی تحریک شروع کر رکھی ہے اور ربیع الاول کا مہینہ پیغام سیرت کے طور پر منارہے ہیں۔ ہم نے پاکستان میں شریعت محمد ی کے نفاذ کے لیے جدوجہد کرنی ہے پوری قوم ہمارا ساتھ دے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں