37

امریکی لابی سعودی عرب کو بدنام کرنے کے لئے حیلے بہانے تلاش کرتی رہتی ہے:ڈاکٹرعبدالغفورراشد

لاہور (پاکستان اپ ڈیٹس ) تحفظ حرمین شریفین کونسل کے چیرمین ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے نئی تنظیم کے مرکزی ڈھانچے کا اعلان کرتے ہوئے بلوچستان سے حافظ ناصرالدین ضامرانی کو سیکرٹری جنرل اور حافظ ممتاز حسین کو سیکرٹری اطلاعات مقرر کردیا ہے۔ لاہور پریس کلب میں نیوز کانفرنس سے خطاب میں ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے کہا کہ مرکزی عہدیداروں میں پورے ملک سے نمائندگی دینے کی کوشش کی گئی ہے۔ جس کے مطابق ڈاکٹر ریاض الرحمان یزدانی سینیر وائس چیرمین، مفتی عاشق حسین بخاری، مولانا عبدالرحیم گجر، مولانا عبدالرحمن ثاقب اور ڈاکٹر عبدالمہیمن کو وائس چیرمین، پروفیسر عتیق اللہ عمر، مولانا عبداللہ ناصر رحمانی،چودھری طاہر کٹاریہ اور مولانا عبدالحسیب حسن ڈپٹی سیکرٹری جنرل ہوں گے۔ جبکہ حافظ ممتاز حسین کو سیکرٹری اطلاعات ، عبدالودود علوی کوسیکرٹری مالیات اور عبدالعظیم جانباز معاون سیکرٹری مالیات نامزدکیا گیا ہے۔ میاں عثمان راشد میڈیا ایڈوائزر، الشیخ انس مدنی،رابطہ سیکرٹری اور قاری ارشاد الرحمان آفس سیکرٹری ہوں گے۔ ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے کہا کہ تحفظ حرمین شریفین کونسل کسی ملک یا طبقے کے خلاف نہیں پائی، ہمارا پیغام نفرت نہیں، محبت ہے جس کی بنیاد کلمہ طیبہ اور حرمین شریفین کا تحفظ ہے۔ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے کہا کہ سعودی عرب امریکہ کا اتحاد ی نہیں، صرف سفارتی تعلقات ہیں۔ اسرائیل کو تسلیم کرنے کا کوئی امکان نہیں۔ انہوںنے کہا کہ فرقہ واریت زہر قاتل ہے۔ تکفیر اور مخالف فرقوں کے خلاف کفر کے فتووں نے امت مسلمہ کو کمزور کیا ہے۔ مذہب کے لبادے میں کچھ عناصر کی طرف سے تکفیریت اور جیتے جاگتے لوگوں کو واصل جہنم کرنے کے فتووں کے خلاف جدوجہد کریں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ پورے ملک میں تحفظ حرمین شریفین کونسل تنظیمی ڈھانچہ تشکیل دیا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ ناموس رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے تحفظ، ختم نبوت کی پاسبانی،گلستان اسلام کی آبیاری،حرمین شریفین کے دفاع،خدام حرمین سے مکمل طور پر اظہار یکجہتی،بین المذاہب ہم آہنگی،بین المسالک رواداری،اور قومی وملی اصول وضوابط کی پاسداری تحفظ حرمین شریفین کونسل کا مشن ہے۔ ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے کہا کہ امریکی اور اسرائیلی لابی سعودی عرب کو بدنام کرنے کے لئے حیلے بہانے تلاش کرتی رہتی ہے۔ اس حوالے سے کسی کو غلط فہمی میں نہیں رہنا چاہیے کہ بیت اللہ او ر حرم نبوی کی وجہ سے سعودی عرب امت مسلمہ کا ایمانی مرکز ہے۔بادشاہ وقت اور ولی عہد محمد بن سلمان کے دل پاکستانیوں کے ساتھ دھڑکتے ہیں۔ انہوںنے نہ صرف اب نئی پاکستانی حکومت کے ساتھ مالی تعاون کیا ہے بلکہ گذشتہ حکومتوں کے ساتھ بھی اچھے رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ارض حرمین سعودی عرب کی طرف کسی کو میلی آنکھ بھی نہیں دیکھنے دیں گے۔ اس حوالے سے مختلف سیمینارز منعقد کئے جائیں گے، تاکہ امت مسلمہ کو نئے حالات سے آگاہ کیا جائے۔ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پاکستان یونائیٹڈ کونسل بھی برقراررہے گی۔اس پلیٹ فارم سے بین المذاہب اور بین المسالک ہم آہنگی کے لئے زور دیں گے۔ مفتی عاشق بخاری نے کہا کہ سازش کے تحت عالم اسلام کو انتشار کا شکار کیا گیا۔ لیبا، شام اور عراق کے بعد استعماری قوتوں کا ہدف سعودی عرب اور پاکستان ہیں۔ پروفیسرعتیق اللہ عمر نے کہا کہ حرمین شریفین اللہ تعالیٰ کی نشانی ہیں۔ تمام مسلمان بلا تفریق مسلک و مکتب اس کی حفاظت کے لئے تیار ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں