49

مقبوضہ کشمیر میں شہید 11 نوجوانوں کی نماز جنازہ میں ہزاروں افراد کی شرکت

سری نگر(پاکستان اپ ڈیٹس ) مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے ہاتھوں 11 بے گناہ نوجوانوں کی شہادت کیخلاف مکمل ہڑتال ہوئی اور شہدا کی نماز جنازہ میں ہزاروں افراد نے شرکت کی۔ کشمیر میڈیا سروس کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں ہزاروں افراد کرفیو اور دیگر پابندیوں کو توڑتے ہوئے گھروں سے نکل آئے اور 11 نوجوانوں کی نماز جنازہ میں شرکت کی جنہیں بھارتی فوج نے گزشتہ روز فائرنگ کرکے شہید کردیا تھا۔ اس موقع پر پلوامہ میں بھارتی فوج کی بھاری نفری تعینات تھی اور شدید کشیدہ صورت حال رہی لیکن بھارتی جبر و استبداد اور پابندیوں کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے آس پاس کے گاؤں دیہات سے ہزاروں افراد اپنے شہدا کے آخری دیدار اور ایک جھلک دیکھنے کے لیے امڈ آئے۔ سوگواروں میں خواتین اور بچے بھی شامل تھے اور جب 11 شہدا کے جنازے اٹھے تو رقت آمیز مناظر دیکھنے میں آئے اور ہر آنکھ اشک بار تھی۔ نوجوانوں کو آہوں اور سسکیوں میں سپرد خاک کیا گیا جبکہ اس موقع پر کشمیریوں نے ایک جذبے کے ساتھ جدوجہد آزادی جاری رکھنے کا عزم کیا۔ جنازے میں شریک کشمیریوں نے بھارتی دہشت گردی کے خلاف احتجاج کیا اور عالمی برادری و اقوام متحدہ سے اس قتل عام پر خاموشی و بے حسی ختم کرنے کا مطالبہ کیا۔ مظاہرین نے بھارت کے خلاف اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔ قابض افواج کے ہاتھوں نہتے نوجوانوں کی شہادت کے خلاف حریت کانفرنس کی اپیل پر وادی بھر میں ہڑتال رہی اور کاروبار زندگی معطل رہا۔ بھارتی ظلم و جارحیت کے خلاف سری نگر سمیت مختلف علاقوں میں احتجاجی مظاہرے پھوٹ پڑے اور مشتعل نوجوانوں نے قابض فوج پر شدید پتھراؤ کیا۔ قابض فوج نے جواب میں نہتے نوجوانوں پر گولیاں چلائیں، پیلٹ گنز سے فائرنگ اور آنسو گیس کی شیلنگ کی۔ کٹھ پتلی انتظامیہ نے احتجاج اور مظاہرے روکنے کے لیے وادی میں ٹرین، انٹرنیٹ اور موبائل فون سروس بھی معطل کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں