77

نواز، زرداری کے گلے شکوے برقرار، 18 ویں ترمیم میں تبدیلی سے بحران پیدا ہو گا: فضل الرحمن

اسلام آباد (پاکستان اپ ڈیٹس ) جمعیت علما اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے آصف زرداری اور نواز شریف کے گلے شکوے اب بھی برقرار ہیں۔ آصف زرداری اور نواز شریف کے درمیان دوریاں ختم کرانے کے لئے کوشش نہیں کررہا، موجودہ حالات میں اپوزیشن کا اکٹھا ہونا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ مولانا فضل الرحمن نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا خواہش ہے کہ آصف زرداری اور نواز شریف کے درمیان دوریاں ختم ہوجائیں۔ اس سے قبل بھی دونوں کے درمیان دوریاں ختم کرانے کے لئے سنجیدہ کوششیں کیں تاہم آصف زرداری اور نواز شریف کے گلے شکوے اب بھی برقرار ہیں۔ سیاست میں گلے شکوے ہوتے رہتے ہیں۔ اپوزیشن جماعتوں کو گلے شکوے دور کرکے متحد ہونا چاہئے۔ 18 ویں ترمیم میں تبدیلی آئی تو ملک میں بحران آئے گا ، ترمیم میں تبدیلی کا مطلب ہے پورا آئین بدلنا، روز روز نئے تجربات کے عمل سے ہمیں نکل جانا چاہئے، اگر سیکولر ہی بنانا ہے تو بھارت سے کیوں الگ ہوئے۔ نجی ٹی وی پروگرام میں اظہار خیال کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ناپائیدار فیصلے سیاسی مقاصد کیلئے ہوتے ہیں یہ انصاف کا عمل نہیں بلکہ ایک کھیل ہے۔ ق لیگ میںکوئی جائے تو پاک، ن لیگ میں جائے تو گنہگار، نیب کو ختم نہ کرکے سب نے مصلحتوں سے کام لیا، نیب انتقامی سیاست کا مظہر ہے ، سیاستدانوں کو مجرم بنانے کیلئے نیب استعمال ہوتا ہے اس وقت مقصد سیاستدانوں کو بدنام کرناہے ، تاثر دیا جارہا ہے ہم نے حکومت کا بندہ بھی گرفتار کرلیا ۔ نواز شریف کو پانامہ کیس میں نااہل قرار دیا گیا ، ایک اقامے کا حوالہ دیا گیا وہ پارٹی صدارت الیکشن لڑنے کیلئے بھی نااہل ہوگیا اب یہ سارا کیس ختم ہوگیا۔ نیب کے پیچھے اسٹیبلشمنٹ ہے۔ صدارتی طرز حکومت آمریت کی علامت رہا ہے۔ ریاست کی سطح پر کئی ناجائز اقدامات ہوئے ہیں اختلافات کریں تو دہشت گرد کہتے ہیں۔ نا اہل حکومت کے پیچھے آمرانہ سوچ ہے ، میڈیا پر قدغن لگنا ڈکٹیٹر شپ کی علامت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں