262

سعودی عرب ۔ برطانیہ خطے میں ’تزویراتی حلیف ‘سعودی ولی عہد کا دورہ برطانیہ مکمل، مشترکہ اعلامیہ جاری

لندن (پاکستان اپ ڈیٹس )سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز برطانیہ کا تین روزہ دورہ مکمل کرنے بعد وطن واپس لوٹ گئے ہیں۔ جمعہ کی شام بڑی برطانیہ اور سعودی عرب کی طرف سے ایک مشترکہ اعلامیہ جاری کیا گیا جس میں کہا گیا کہ دونوں ممالک خطے میں ایک دوسرے کے تزویراتی حلیف ہیں۔ سعودی ولی عہد برطانیہ کی ملکہ الیزابیتھ دوم کی دعوت پر چھ مارچ کو تین روزہ دورے پر لندن پہنچے تھے۔ ان کے اس دورے کامقصد دونوں ملکوں کے درمیان تاریخی تعلقات کو مزید مستحکم کرتے ہوئے تزویراتی شراکت کو مزید گہرا کرنا اور باہمی مفادات اور تزویراتی اہداف کے حصول کے لیے مل کر کوششیں کرنا ہے۔ سعودی عرب کے سرکاری خبر رساں ادارے’ایس پی اے’ کی طرف سےجاری کردہ مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ سعودی عرب اور برطانیہ خطے میں ایک دوسرے کے اسٹریٹیجک پارٹنر ہیں۔ مملکت برطانیہ سعودی عرب کے ویژن 2030ء کو ہرممکن مدد اور حمایت فراہم کرنے کا پابند ہے۔ مشترکہ اعلامیے میں صحت، تعلیم، ثقافت، تفریح، تجارت، سرمایہ کاری اور اسپیشل سیکٹر سمیت دیگر شعبوں میں مشترکہ تعاون جاری رکھنے پر زور دیاگیا ہے۔ اعلامیے میں برطانیہ اور سعودی عرب کے درمیان باہمی دفاعی اور سیکیورٹی تعاون کی اہمیت پر بھی روشنی ڈالی گئی ہے۔ دونوں ملکوں نے عالمی سلامتی کے لیے ایک دوسرے کےساتھ ملک کر کام کرنے، دہشت گردی کے خلاف جنگ جاری رکھنے، انسانی بہبود اور قومی ترقی کےمنصوبوں میں ایک دوسرےکا ہاتھ بٹانے کی پالیسی پر عمل پیرا رہنے کی یقین دہانی کرائی گئی ہے۔ بیان میں یمن میں جاری کشیدگی اور جنگ کو خلیج تعاون کونسل کے فریم ورک کے مطابق بات چیت کےذریعے ختم کرنے سے بھی اتفاق کیا گیا ہے۔ مشترکہ اعلامیےمیں مشرق وسطیٰ کےدیرینہ اور حل طلب مسائل کے فوری حل بالخصوص تنازع فلسطین کے دو ریاستی حل، شام، عراق، لیبیا اور لبنان کے تنازعات کے منصفانہ اور پرامن حل پر زور دیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں