233

ایم ایم اے کے قائدین میں اختلافات کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں ۔سینیٹرپروفیسر ساجد میر

لاہور ( پاکستان اپ ڈیٹس ) امیر مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان سینیٹرپروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ جمہوریت کے بازو مروڑ نے کی کوشش کی جارہی ہے۔سینیٹ کے انتخابات کا تجربہ عام انتخابات میں بھی دہرا یا جاسکتا ہے ۔ انتخابات کا شفاف اور بروقت انتخاب ضروری ہے ۔مینڈیٹ چرانا کرپشن سے بھی بدتر فعل ہے ۔ ہارس ٹریڈنگ کا راستہ روکنے کے لیے سیاسی جماعتوں کو مل کرعام انتخابات کا ضابطہ اخلاق بناناہو گا ۔ مرکز 106 راوی روڈ پر آل پاکستان اہل حدیث کانفرنس کی کامیابی کے سلسلے میں علما ء کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ ایم ایم اے کے قائدین میں اختلافات کی خبروں میں کوئی صداقت نہیں ، کسی بھی اتحاد کے پلیٹ فارم پراختلاف رائے کا پیدا ہونا کوئی بڑی بات نہیں۔ اتحاد کے مخالف نہیں چاہتے کہ فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی فضا بنے۔ ایم ایم اے میں شامل تمام جماعتوں کی حیثیت یکساں ہے اور قائدین کے فیصلے بھی متفقہ اور یکساں حیثیت رکھتے ہیں ۔ دینی شعائر اور اقدار کے تحفظ اور فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لیے ایم ایم اے کا پلیٹ فارم موثر کردار اداکرسکتا ہے ۔ملکی حالات کا تقاضا ہے کہ دینی قوتوں کے درمیان ہم آہنگی پیدا ہو۔ فرقہ وارانہ شدت پسندی اور پھر دہشت گرد ی کے واقعات کو کنٹرول کرنا ملکی سلامتی کا تقاضا ہے ۔اس سلسلے میں ایم ایم اے کی قیادت موثر کردار اداکرسکتی ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں